جرمنی : لاک ڈاؤن 3 مئی تک برقرار رکھنے کا فیصلہ۔

جرمن چانسلر انجیلا میرکل نے کوروناوائرس کے خطرے کے پیش نظر لاک ڈاؤن کا سلسلہ 3 مئی تک بڑھانے اور 31 اگست کے تمام بڑے اجتماعات کو ملتوی کرنے کا اعلان کردیا تاہم 31 اپریل کو حتمی اعلان کیا جائے گا کہ لاک ڈاؤن کا سلسلہ آگے جاری رہے گا یا ااٹھایا جائے گاانہوں نے 4 مئی سے اسکولوں کو کھولنے کا اعلان کرتے ھوئے کہا کہ اسکولوں میں کوروناوائرس سے بچائو اور آپس میں فاصلہ اختیار کرنے اور دیگر احتیاطی تدابیر پر کلاسز ھونگی۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے بدھ کو ایک پریس کانفرنس کرتے ھوئے جرمن قوم اور جرمنی میں بسنے والی دیگر باشندوں کو شکریہ ادا کرتے ھوئے کہا کہ میں اور میرے کابینہ کے ارکان قوم کا شکریہ ادا کرتے ہیں کہ اس کٹھن امتحان میں گھروں میں رہتے ھوئے اس وباء کا مقابلہ کررہے ہیں میں پوری قوم سے التجاء کرتی ھوئی کہ 3 مئی تک گھروں میں رہے غیر ضروری گھروں سے نا نکلا کرے اشیائے خوردونوش فروخت کرنے والے اداروں کو حفاظتی اقدامات کرکے اپنا کام شروع کرنے کی اجازت دیتے ہیں تاکہ عوام کو کوئی دوسری ازمائش کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔

انہوں نے کہا کہ تمام صوبے اپنے حفاظتی اقدامات کا معیار اور کوروناوائرس سے متاثرہ علاقوں کو کھولنا ہے اور کس علاقے کو بند کرنا ہے اس کا فیصلہ اپنے علاقائی صورتحال کے مطابق کریں گے،لیکن ہر گز بڑے پیمانے پر نہیں تاکہ عوام کو اس وباء سے بچایا جاسکے ہم ہرگز نہیں چاہتے کرونا وائرس کے مریضوں کی تعداد بڑھ جائے اور مریض کیساتھ ساتھ ڈاکٹرز، نرسز اور میڈکل سٹاف کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑے ۔جرمن عوام سے درخواست ہے کہ وہ گھروں میں بیٹھیں رہے اور اس مشکل وقت میں ہمارا ساتھ دیں۔

انگیلا میرکل نے کہا کہ جرمنی میں بڑے پیمانے پر ہونے والے تمام پروگرام جن میں عوام کی بڑی تعداد شرکت کرے، 31 اگست تک مکمل طور پر ملتوی ہونگے جبکہ 4 مئی سے تمام وہ سکول کھول دیئے جائیں گے جہاں بڑی کلاسیں ہوتی ہیں اور تمام بڑی کلاسوں کے طالب علموں کو سکول کے دوران یہ سکھایا جائے گا کہ وہ کس طرح سکول آئیں، کیسے سفر کریں، کس طرح فاصلہ رکھیں اور اپنے آپ کو ایک دوسرے سے کیسے دور رکھنا ہے ، ان سب حفاظتی اقدامات کی تربیت دی جائے گی۔انجیلا میرکل نے جرمن عوام کا خاص طور پر شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا ہے کہ جس طرح جرمن عوام نے ہمارا ساتھ دیا ہے اس وجہ سے ہم اس وبا پر کنٹرول کرنے میں کافی حد تک کامیاب ہوئے ہیں اگر عوام گھروں میں بیٹھ کر ہمارا ساتھ نہ دیتی تو آج ہمارے ملک کی حالت بہتر نہ ہوتی بلکہ مریضوں کی تعداد میں شدت سے اضافہ ہوچکا ہوتا۔انجیلا مرکل نے کہاکہ آئندہ بھی عوام سے درخواست کرتی ہوں کہ 3 مئی تک مکمل طور پر گھروں میں رہیں بلاوجہ گھر سے باہر مت نکلیں ۔ ہم ہرگز نہیں چاہتے کرونا وائرس کے مریضوں کی تعداد بڑھ جائے اور مریض کیساتھ ساتھ ڈاکٹرز، نرسز اور میڈکل سٹاف کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑے ۔لہذا جرمن عوام سے درخواست ہے کہ وہ گھروں میں بیٹھیں ہیں اور اس مشکل وقت میں ہمارا ساتھ دیں ۔انہوں نے اشیائے خوردونوش فروخت کرنے والے اداروں کو حفاظتی اقدامات کرکے اپنا کام شروع کرنے کی اجازت دے دی ۔

انجیلا مرکل 30 اپریل کو اگلی پریس کانفرنس کرینگے جس میں صورتحال کو مد نظر رکھتے ہوئے 3 مئی کے لاک ڈاؤن کے متعلق مزید فیصلے سنائے جائیں گے ،آیا جرمنی میں سے لاک ڈاؤن ختم کردیا جائےیا اگر صورتحال بہتر نہ ہوسکی تو لاک ڈاؤن کی تاریخ میں مزید توسیع کر دی جائے گی۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com