سیاسی پناہ گزینوں سے متعلق قوانین میں ترامیم کا بل یونان پارلیمنٹ میں پیش کر دیا گیا۔سخت فیصلے متوقع ۔

یونان میں سیاسی پناہ پناہ حاصل کرنے والے پناہ گزینوں کے متعلق قوانین میں ترامیم کا بل یونانی پارلیمنٹ میں پیش کردیا گیا۔

اس قانون کے بارے میں بحث کے بعد اسے منظور کر لیے جانے کا قوی امکان ہے اس قانونی مسودے میں پناہ  گزینوں کے کیسز کا فیصلہ جلد سے جلد کیے جانے کی شق موجود ہے اور ایسے پناہ گزین جن کو سیاسی پناہ کا اہل سمجھا جائے گا انہیں یونان کے مخصوص کیمپوں اور اس کے اردگرد کے علاقوں میں رہنے کی اجازت ہوگی۔

دوسری جگہ منتقل ہونے کے لیے خصوصی اجازت نامہ درکار ہوگا کسی بھی سیاسی پناہ سے متعلق موصول ہونے والی درخواست کا فیصلہ 6 مہینے کے اندر اندر کر دیا جائے گا ۔

کچھ مخصوص حالات میں اپیل کی اجازت ہوگی اور اور اگر کوئی پناہ گزین بیماری ظاہر کرنا چاہے گا تو اس کی سخت تفتیش کی جائے گی جو کہ مخصوص ڈاکٹرز کریں گے۔

پناہ  گزینوں کے حوالے سے قوانین میں ترامیم کا بل جونہی پارلیمنٹ میں پیش کیاگیاتو بہت سی انسانی حقوق کی تنظیموں نے اس کی مخالفت شروع کر دی جن میں بارڈرز کے بغیر ڈاکٹرز اور حزب اختلاف کی جماعتیں بھی شامل ہیں ۔

حزب اختلاف کی جماعتوں کا کہنا ہے کہ پناہ گزینوں کو اپیل کا مکمل حق ہونا چاہیے اور حکومت اتنی جلدی اس بل کو منظور نہ کرے تمام فریقین کو اس کی کاپی مہیا کی جائے اور وہ اس ترامیمی بل کا بغور جائزہ لے سکیں ۔

اس کے علاوہ بہت سی انسانی حقوق کی تنظیموں کا کہنا ہے کہ پناہ گزینوں کو ان کے بنیادی حقوق سے محروم کیا جا رہا ہے مزید برآں حکومت چاہتی ہے کہ ایسے پناگزین جن کی سیاسی پناہ کی درخواستیں نا منظور ہوچکی ہوں انہیں جلد سے جلد یونان سے ڈی پورٹ کر دیا جائے۔

اس حوالےسے ترمیمی بل پر پارلیمنٹ میں بحث ہونے کے بعد جلد ہی یہ قانون کا حصہ بن جائے گا۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com