پاکستان میں معمول سے زیادہ برفباری اور بارشیں، سردیاں طویل۔

پاکستان میں اس برس موسم سرما میں ملک کے مختلف حصوں میں 50 فیصد زیادہ برفباری اور بارشیں معمول سے 25 سے 30 فیصد زیادہ ریکارڈ کی گئی ہیں جن کی بنا پر ملک کے پانی ذخیرہ کرنے والے بڑے ڈیموں تربیلا اور منگلا میں سطح آب بھی معمول سے زیادہ ہے۔

پاکستان کے محکمۂ موسمیات کے چیف میٹرولوجسٹ ڈاکٹر حنیف نے بی بی سی کو بتایا کہ مالاکنڈ، ہزارہ ڈویژن، مری، گلگت بلتستان اور پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر میں 22.5 انچ برف پڑ چکی ہے اور مارچ میں موسم سرما کے اختتام تک یہ بڑھ کر 50 انچ تک ہو جائے گی۔

انھوں نے موسم کی اس تبدیلی جس سے عام لوگ کسی حد تک پریشان بھی ہوئے ہیں ملک کی معیشت کے لیے مثبت قرار دیا اور کہا کہ اس کی وجہ سے دریاؤں میں زیادہ پانی آنے کی توقع ہے۔

ایک اور موسمیاتی ماہر اور پی ایم ڈی کے ڈائریکٹر خالد ملک نے ایک مقامی ٹی وی چینل کو بتایا کہ گذشتہ سال 70فیصد کم برفباری ہوئی۔

انھوں نے گذشتہ برسوں کا ریکارڈ دیتے ہوئے بتایا کہ سنہ 2004 اور 2005 کے موسم سرما میں ملک میں مجموعی طور پر 81 انچ برف پڑی تھی جبکہ گزشتہ دو برس میں یعنی 2016-17 میں 44 انچ اور 2017-18 میں 17.5 انچ برف ریکارڈ کی گئی تھی۔

گذشتہ چند برسوں میں کم برفباری کی وجہ سے موسم سرما کے دورانیے میں کمی دیکھنے میں آئی تاہم اس بار دسمبر سے شروع ہونے والی سردی اب تک جاری ہے جس میں خاصی شدت بھی آئی ہے۔

ماہرین کے مطابق شدید سردی اور غیر معمولی بارشوں کا یہ سلسلہ مارچ کے وسط تک وقفے وقفے سے جاری رہے گا۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com